German Cabinet Approved New Skilled Labor Immigration law.

جرمن کابینہ نے امیگریشن قوانین کی منظوری دے دی

جرمنی کو کس طرح غیر یورپی ممالک کے تعلیم یافتہ اور ہنر مند افراد کے لیے پرکشش بنایا جا سکتا ہے؟ برلن حکومت ملکی کابینہ کی جانب سے منظور کیے گئے دو قانونی مسودوں کے ذریعے اسی منزل تک پہنچنا چاہتی ہے۔

ابتدائی طور پر وفاقی مخلوط حکومت میں شامل جماعتیں ان مسودوں میں درج تفصیلات پر منقسم رائے رکھتی تھیں۔ تاہم منگل کو یونین جماعتوں اور سوشل ڈیموکریٹک پارٹی کے مابین امیگریشن کے حوالے سے نئے قوانین کے مسودوں پر اتفاق رائے ہو گیا۔

اب جرمن کابینہ نے بھی انہیں منظور کر لیا ہے۔ ان مسودوں یعنی ماہرین کے لیے مجوزہ امیگریشن قوانین میں یورپ سے باہر کے ممالک سے تعلق رکھنے والے پیشہ ور اور ہنر مند افراد کے لیے مشکلات کو کم کرنے کی کوشش کی گئی ہے تاکہ غیر ملکی پیشہ ور افراد جرمنی کا رخ کریں

اس سے قبل جرمنی میں امیگریشن سے متعلق پالیسیوں میں صرف تعلیم یافتہ پیشہ ور افراد یعنی پروفیشنلز پر ہی توجہ دی گئی تھی۔ اس پیش رفت سے ’امپلائمنٹ ٹولیریشن‘ قانون ایک طرح سے ختم ہو گیا ہے۔

مسودے کے مطابق غیر یورپی ممالک کے شہریوں کے ہنرمند افراد کے لیے ورک ویزا اور نوکری کی تلاش کا ویزا آسان کیا جائے گا۔   جرمنی میں کے نوکری کی تلاش کےلیے ویزا حاصل کرنے کے لیے درخواست گزارکے پاس سفر کے لیے درکار کافی فنڈز اور جرمن لیگوئج   پر عبور لازمی ہو گا۔  جرمن ایمپلائرز کے لیے  کسی بھی شعبے میں کسی غیر یورپی ممالک کے شہری کو نوکری دینے کے لیے جرمنی کی حکومت سے اِجازت نامہ اور نوکری کی خالی آسامی کی تشہیر کی شرط نہ ہوگی۔

اس طرح اب ایسے عبوری رہائشی اجازت ناموں کے حامل تارکین وطن کو بھی کم از کم تیس ماہ کا ویزا دیا جائے گا، جو برسر روزگار ہوں، حکومت پر مالیاتی حوالے سے بوجھ نہ ہوں اور معاشرے میں ضم ہو چکے ہوں۔ اس کے لیے ایک شرط رکھی گئی ہے کہ کوئی بھی تارک وطن  کم از کم اٹھارہ ماہ سے قانونی طور پر برسر روزگار ہو۔

جرمن وزیر داخلہ ہورسٹ زیہوفر کے مطابق اپنی خوشحالی کے تحفظ اور اس کے معیار کو برقرار رکھنے کی خاطر جرمنی کو غیر ملکی ہنر مند افراد کی ضرورت ہے۔ ان کے بقول اس مقصد کے لیے قانونی تقاضے پورے کرنے کا یہ انتہائی موزوں وقت ہے۔

سوشل ڈیموکریٹک پارٹی سے تعلق رکھنے والے وزیر محنت ہوبرٹس ہائل کے مطابق، ’’بیس سال کے بحث و مباحثے کے بعد جرمنی ایک جدید امیگریشن قانون اپنانے جا رہا ہے۔‘‘

دوسری جانب جرمن ٹریڈ یونینوں کی تنظیم کا کہنا ہے کہ اگر وسیع تر مخلوط حکومت نے اس مسودے پر نظرثانی نہ کی، تو اس کا مطلب سماجی انضمام  کے ایک موقع کو ضائع کرنا ہو گا۔ مزید یہ کہ اب تک کی دستاویزی پیش رفت تنخواہوں میں کمی اور استحصال کی وجہ ہی بنی ہے۔

Read How to Apply Germany Work Visa by Clicking Here.

Source: Deutsche Welle

11 thoughts on “German Cabinet Approved New Skilled Labor Immigration law.

  1. Assalam o elikum. I am english language teacher since 2011 and certified by the British Council Islamabad, Do i have an equal oppurtunity in this option?

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

%d bloggers like this: